یوکرین پر حملہ؛ اقوام متحدہ میں روس کیخلاف مذمتی قرارداد کثرت رائے سے منظور

یوکرین پر حملہ؛ اقوام متحدہ میں روس کیخلاف مذمتی قرارداد کثرت رائے سے منظور

ویانا| اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں کثرت رائے سے منظور ہونے والی مذمتی قرارداد میں روس سے فوری طور پر اپنی فوجیں یوکرین سے نکالنے اور جنگ بندی کا مطالہ کیا گیا ہے۔

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں ہونے والے اجلاس میں روس کے خلاف مذمتی قرارداد کی 141 ممالک نے حمایت کی جب کہ 7 ممالک نے مخالفت کی۔ مذمتی قرار داد کی مخالفت کرنے والے ممالک روس، بیلاروس، شمالی کوریا، اریٹیریا، مالی، نکاراگوا اور شام تھے جب کہ چین، جنوبی افریقا، پاکستان، بھارت اور ایران سمیت 32 ممالک نے قرارداد میں حصہ نہیں لیا۔

قرارداد میں یوکرین کے چار بڑے علاقوں کو متنازع ریفرنڈم کے ذریعے اپنی ریاست میں ضم کرنے کے روسی دعوے کو مسترد کرتے ہوئے یوکرین کی ’خودمختاری‘ اور ’علاقائی سالمیت‘ کی حمایت کی توثیق کی گئی۔ اقوام متحدہ کی قرارداد میں یہ بھی مطالبہ کیا گیا ہے کہ روس فوری اور مکمل طور بغیر کسی شرط کے تمام فوجی دستے یوکرین سے اپنی بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ سرحدوں کے اندر واپس بلائے۔

خیال رہے کہ یوکرین کریمیا اور دیگر 4 علاقوں کو اپنی حصہ قرار دیتا ہے تاہم بین الااقوامی سطح پر روس کے اس دعوے کو کبھی تسلیم نہیں کیا گیا۔ یاد رہے کہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی مذمتی قرارداد پر قانونی طور پر روس کو اس پر عمل کرنے کا پابند نہیں بناتا تاہم ایسی قرادادوں کی سیاسی اہمیت ضرور ہوتی ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں